Skip to main content

                                           رب نوں یار منیے                

 غموں کی لال آندھی اور مصائب کی کالی گھٹا جب ابن آدم کو اپنی لپیٹ میں لیتی ہے تو یہ کمزور نفس اپنے نحیف یقین سے پکارتا ھے عرش پہ رہنے والے کو۔ صدا دیتا ہے آسمان کو۔ کہ نکالے مجھے اس بھنور سے۔



 مگر اس کی پکار ختم ہونے سے پھلے ہی خدا کی رحمت جوش میں آتی ہے۔ اور اسے مشکلات کے گرداب سے نکال کر رحمت کی بارش تلے لے آتی ہے ۔  تب اسے اپنی صدا کی بے یقینی پر ندامت ہونے لگتی ہے۔ ندامت ہونے لگتی ہے اپنے فعل پر ۔ خدا کو آسمانوں میں ڈھوندنے پر کہ                                                                                                                                                 
                                  
دل کے آءینے میں ہے تصویریار
جب ذرا گردن جھکاءی دیکھ لی




مگر ہم خدا کو یار نہیں مانتے۔ خدا مانتے ہیں۔ آزماءش دینے والا خدا ۔ آزماءش سے نکالنے والا خدا۔


محبت کرنے والا خدا تو شاید ہمارے گمان میں ہے ہی نہیں

خدا سے مانگنے تو سب جاتے ہیں۔ خدا کو مانگنے کوئی نہیں آتا ۔۔۔۔۔۔ کوئی اس کا متمنی نہیں۔ سب متمنی ہیں تو اپنی خواہشات کے پورا ہونے کے

مگر جب خواہشات کے منہ زور گھوڑے کو لگام لگتی ہے اکتاہت کی ۔ کہ افراط ہر چیز کی باعث_ جھنجلاہٹ ہے تو ہر شے کے حصول کے بعد اسے رب سے ملنے کا
خیال آتا ہے۔ چناچہ وہ ڈھوندنے نکلتا ہے خدا کو مسجدوں میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آسمانوں میں۔۔۔۔۔۔۔۔صحراوں میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مندروں میں
۔۔۔۔۔۔۔شاید نہیں معلوم کہ  خدا تو اس کے اندر ہی موجود ہے۔ بس اپنے 
نفس کو مارنے کی دیر ہے۔ اور جسں کسی کو بھی ملا خدا وہ اوصاف کریمہ کا حامل تصوف کی
 بلندی کو جا پہنچا۔۔۔۔۔ پھر یہی کہتا رہا ساری حیاتی۔

  یار کو ہم نے جا بجا دیکھا





عقل کی کسوٹی پر ہر بات کو پرکھنے والے تو عشق کی شدت کو اس حد تک مان سکتے ہیں کہ اپنے نفس کو مار کر خدا کی قربت نصیب ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔ اور پھر جگ بھر میں وہی نظر آتا ہے۔۔۔۔

تو ہی آیا نظر جدھر دیکھا






مگرعشق حقیقی کو سمجھنے کے دعویدار شاید انا الحق کو سمجھنے سے قاصر ہیں۔۔

ڈبویا مجھ کو ہونے نے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔




رب اندر ہی موجود ہے۔ بس نفس کی دبیز تہ کو ہٹانے کی دیر ہے۔۔۔۔۔۔ مگر ہم کیوں ہٹائیں یہ تہ کہ زندگی وقف ہے ابھی خواہشات کی تکمیل کے لیے۔ خدا کو برھاپے کے سہارے کے لیے اٹھا رکھا ہے



Comments

  1. Great job Ayesha!! Absolutely Beautiful!! :)

    ReplyDelete
  2. superb..! loving it.<3

    ReplyDelete
  3. Its a masterpiece (Y)..no words....keep it up ayesha :)

    ReplyDelete
  4. hats off to the artwork (y)

    ReplyDelete

Post a Comment

We'd love your feedback !

Popular posts from this blog

Lecture Slides: Urology; Renal cell Carcinoma

1st Year IMPORTANT TOPICS (Anatomy)

By Farkhanda QaiserOkay finally here it is. The all-important guide for the 1st year students. I’ve compiled all the prof and sendup questions of last year as well as the remnants of class tests that I had.But before you go on to read them, keep in mind the following very tested tidbits:For profs, NEVER leave any topic untouched and unread. Go through all topics so that in viva, you have atleast some idea about what the examiner is asking.NEVER lose your sendup question paper because there are high chances that some of the questions will be repeated in profs as you can see in the following example of anatomy question paper and same goes for the MCQs. Most of them are repeated. So here’s what we had done, in our facebook class group, we had made a discussion topic, and everyone told the MCQs of sendups and discussed them. Well, you may think us nerds or whatever but trust me that discussion proved very fruitful for all those who participated in it.I think enough has bin said about orga…

USMLE Step 1 Experience by Ayaz Mehmood (Score : 99/266)

USMLE Step 1 Experience by Ayaz Mehmood (Score : 99/266)
Salam everyone, let me start in the name of Allah who’s the greatest benefactor of all mankind. I am going to write a detailed composition regarding preparation for USMLE Step 1. I am a final year student at King Edward Medical University and I took my exam on June 10th. Final year is the year before internship/ house job in Pakistan. I just got my scores: 99/266



Let me introduce some myths surrounding USMLE Step 1 which are especially prevalent within Pakistan; I am not too sure about India because I heard their students typically appear in their final years.


 Myth number 1:Do not appear for USMLE Step 1 within your graduation

 Verdict: Baseless, illogical reasoning

Explanation: This is so prevalent in Pakistan it’s almost pathetic. One of the biggest concerns surrounding our students is that Step 1 is a huge risk to be taken before graduation. Let me put it in another way: Step1 would always remain a risk whenever it is taken, …