Skip to main content

آدرش

آدرش


’پاپا آ گئے۔۔۔۔۔پاپا آ گئے۔۔۔۔۔“ علی سکندر اپنے پاپا کی طرف لپکتا ہے جو ابھی آفس سے واپس آئے ہیں۔ ”پاپا چلیں کھیلتے ہیں۔۔۔۔۔ چلیں نا میرے ساتھ۔۔۔۔۔پلیز پاپا۔“ اس کا معصوم دل اپنے باپ کی توجہ کا متمنی تھا۔ مگر اس کا باپ تھکاوٹ کا عذر پیش کرتے ہوئے کہتا ہے: ”بیٹا آپ جا کر ٹی وی پر اپنے پسندیدہ کارٹون دیکھ لیں۔“ اور علی کھیل کی فطری خواہش کو اپنے دل میں دبائے ٹی وی دیکھنے بیٹھ جاتا ہے۔۔۔۔۔شاید وہ معصوم خواہش آئندہ کبھی سر نہ اٹھائے۔


۔۔۔۔۔
”ماما آپ کہاں جا رہی ہیں۔۔۔۔۔؟ مجھے بھی لے جائیں نا۔۔۔۔۔“ معصوم دل سے اک اور خواہش سطح سمندر پر اٹھنے والے بھنور کی طرح سر ابھارتی ہے۔ ”نہیں بیٹا۔۔۔۔۔میں اپنی پارٹی میں جا رہی ہوں۔۔۔۔۔آپ کو نہیں لے جا سکتی۔ آپ ویڈیو گیم کھیلو جو پاپا نے آپ کو سالگرہ پر دی تھی۔ اور اگر بور ہو جاؤ تو ٹی وی لگا لینا۔“ گاڑی کے ہارن کی آواز سنائی دی تو ماں اپنے بچے کو پچکارتی ہوئی باہر نکل جاتی ہے۔



۔۔۔۔۔
بیس سال بعد۔۔۔۔۔
”ارے یہ کیا۔۔۔۔۔کورٹ کا نوٹس“


سکندر مرزا کو اپنے بیٹے کی طرف سے ملنے والے کورٹ نوٹس پر سکتہ ہو گیا۔
اپنے بیٹے سے استفسار کرنے کمرے میں گئے تو دروازے پر ہی ساکت ہو گئے گو یا کسی ان دیکھی قوت نے ان کے پاؤ جکڑ لیے ہوں۔ اس کے ہاتھ میں 
 سگریٹ دیکھ کرشاکڈ رہ گئے۔
ہوش تو تب آئی جب علی سکندر پاٹ دار لہجے میں بولا:۔ ”تمیز نہیں ہے آپ کو۔۔۔۔۔؟ دروازہ کھٹکھٹا کر اندر آیا جاتا ہے۔۔۔۔۔ خیر جلدی بولیں۔۔۔۔۔ مجھے کہیں جانا ہے۔“ سکندر مرزا کورٹ کا نوٹس لیے آگے بڑھتے ہیں۔۔۔۔۔ ہر قدم جیسے منوں بھاری ہو گیا ہو۔۔۔۔۔ ہر سانس آخری ہونے کی آس میں ہو۔۔۔۔۔ اپنے لختِ جگر کو کورٹ کا نوٹس دکھاتے ہیں اس امُید پر کہ شاید یہ غلط ہو۔۔۔۔۔ مگر حقیقی دنیا میں واپس تب آتے ہیں جب علی کہتا ہے:۔ ”یہ میرا حق ہے! آپ میری جائیداد پرغاصب ہیں۔ ویسے بھی آپ قبر میں پاؤں لٹکائے بیٹھے ہیں۔۔۔۔“ ”بیٹا یہ کیا کہہ رہے ہو؟ کیا اتنے پیار سے پال پوس کر اس لیے بڑا کیا تھا؟ یہ تربیت تو نہیں دی تھی میں نے۔۔۔۔۔“ سکندر مرزا کی گھٹی گھٹی آواز آئی۔ ”تربیت۔۔۔۔۔؟؟ وہ نفرت سے بولا۔۔۔۔۔ میری تو یہی تربیت ہوئی ہے۔۔۔۔۔ مجھے تو یہی سکھایا گیا ہے۔ میری تربیت کے مربی نے ہی جائیداد میں میرے حق دار اور آپ کے غاصب ہونے کا بتلایا ہے۔ اور آپ کہتے ہیں تربیت!!! ہونہہ“۔ ”بیٹا یہ کیا کہہ رہے ہو؟ کس نے کی ہے تمہاری ایسی تربیت۔۔۔۔۔؟ ہم ہی تو تمہارے مربی ہیں۔“ ان کی قوتِ گویائی سلب ہو گئی ہو۔ ”ملنا چاہیں گے اس سے جس نے میری تربیت کی؟ جس نے مجھے شعور دیا؟“ علی سکندر ایش ٹرے میں سگریٹ کو مسلتے ہوئے اٹھتا ہے گویا وہ راکھ ان قدروں کی ہو جنہیں وہ عرصہ پہلے مسل چکا ہو۔

وہ اپنے باپ کو لے کر لاؤنج میں آتا ہے اور اشارہ کرتا ہے اپنی تربیت گاہ کی طرف۔۔۔۔۔
.
.
.

.................وہ تھا ٹیلی ویژن!!!

.....................................................................................................................................................
زندگی کی رہگزر میں چلتا راہ گیر جب بودے بیج بوتا ہے تو قانونِ قدرت سے خوش آب فصل کا متمنی ہوتا ہے۔ شاید یہ پیکر خاک لاعلم ہے کہ جو بوؤ گے وہی کاٹو گے۔ پھر فصل کو اپنی امیدوں کے برعکس پروان چڑھنے پر وہ شکوہ کناں کیوں؟ پیر جواناں جب اپنی پود کو اخلاقی قدروں، توجہ و اخلاص سے آراستہ کرنے سے معذور ہے تو اقبال کے شاہینوں سے شکایت کیسی۔۔۔۔۔؟؟؟


Comments

Post a Comment

We'd love your feedback !

Popular posts from this blog

Lecture Slides: Urology; Renal cell Carcinoma

1st Year IMPORTANT TOPICS (Anatomy)

By Farkhanda QaiserOkay finally here it is. The all-important guide for the 1st year students. I’ve compiled all the prof and sendup questions of last year as well as the remnants of class tests that I had.But before you go on to read them, keep in mind the following very tested tidbits:For profs, NEVER leave any topic untouched and unread. Go through all topics so that in viva, you have atleast some idea about what the examiner is asking.NEVER lose your sendup question paper because there are high chances that some of the questions will be repeated in profs as you can see in the following example of anatomy question paper and same goes for the MCQs. Most of them are repeated. So here’s what we had done, in our facebook class group, we had made a discussion topic, and everyone told the MCQs of sendups and discussed them. Well, you may think us nerds or whatever but trust me that discussion proved very fruitful for all those who participated in it.I think enough has bin said about orga…

USMLE Step 1 Experience by Ayaz Mehmood (Score : 99/266)

USMLE Step 1 Experience by Ayaz Mehmood (Score : 99/266)
Salam everyone, let me start in the name of Allah who’s the greatest benefactor of all mankind. I am going to write a detailed composition regarding preparation for USMLE Step 1. I am a final year student at King Edward Medical University and I took my exam on June 10th. Final year is the year before internship/ house job in Pakistan. I just got my scores: 99/266



Let me introduce some myths surrounding USMLE Step 1 which are especially prevalent within Pakistan; I am not too sure about India because I heard their students typically appear in their final years.


 Myth number 1:Do not appear for USMLE Step 1 within your graduation

 Verdict: Baseless, illogical reasoning

Explanation: This is so prevalent in Pakistan it’s almost pathetic. One of the biggest concerns surrounding our students is that Step 1 is a huge risk to be taken before graduation. Let me put it in another way: Step1 would always remain a risk whenever it is taken, …